A new 2021 beautiful ghazal Ahsin Fayaz wrote for his Son


صحراِ دل کی ویرانیوں میں کبھی شامل تھا تُو

صحراِ دل کی ویرانیوں میں کبھی شامل تھا تُو
میری ساری عمر میں ایک تبسُم پل تھا تُو

تم نے ہی تو چلائے نازِ آشفتہ کو سہی راستے
بساطِ بے خودی میں جیسے میری عقل تھا تُو

خوفِ عروج و تنزل بھلا کیا اس کو
جس خاکی بدن کا ابد و ازل تھا تُو

تبسم طبیعت، وہی نازکی، وہ ضدی مزاج
کہتے ہیں مجھ سا ہی بلکل تھا توُ

تجھے دیکھا تھا دارِ ساعت میں ہر دفعہ
یہ کس شہنِ حسن کا ہم شکل تھا توُ

تُو منفرد تھا مختصر بھی مکمل بھی تھا
احسن جیسے آدھی پڑھی ہوی غزل تھا توُ




Poetry by Ahsin Fayaz
Read 66 times
Written on 2021-06-27 at 09:27

dott Save as a bookmark (requires login)
dott Write a comment (requires login)
dott Send as email (requires login)
dott Print text